ففٹی پلس سینئر کلب کا ہفتہ وار اجتماع‘سائنس و مذہب پر گفتگو

ففٹی پلس سینئر کلب کا ہفتہ وار اجتماع‘سائنس و مذہب پر گفتگو

مورخہ 2 اپریل2018 بروز پیر ففٹی پلس سینیر کلب کا ہفتہ وار اجتماع منعقد ہوا  ۔کلب میں سائنس و مذہب علم و ادب پر گرماگرم گفتگو ہوئی بحث کا اآغاز اسوقت ہوا جب ڈاکٹر محبوب عالم نے اپنیے لکچر کے بعد کہا کہ مسلمان سایئنس میں زیادہ دلچسپی لینے سے مذہب سے دور ہو گیے ہیں ۔ افضل خان نے کہا کہ ساینس تو اللہ کو ماننے میں زیادہ مدد دیتی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ،" ڈاکٹر صاحب اآ پ خود لندن سے سایئنس میں پی ایچ ڈی کر کے آایے ہیں سایئنس کی مخالفت کیوں کر رہے ہیں ۔"  انھوں نے اٹیفن ہاکنگ کیے بیان کا حوالہ دیاڈاکٹر محبوب عالم ا اپنے بیان کی مدلل  وضاحت کی  محمد نعیم الدین نے   انکی تایئد میں دلایل دیے ۔ سید شکیل احمد نے  مذہب کی موافقت میں دلایل دیے   اظہر بخاری نے حضرت  علی کییدعایہ کلمات کی نیہایت دلگرفتگی سے اسطرح تشریح کی کہ سامعین پر سکوت طاری ہو گیا ۔ ریحانہ خان نے اس دوران ایک آڈیو ٹیپ  سے ۔۔ " کوی تو  ہے جو نظام ہستی چلارہا ہے ۔۔۔" سناکر اللہ کی موجودگی کی دلیل دی  اسکے بعد ماں  اور باپ کی  اپنے بچوں کے لیے کی جانے والی خدمات پر گفگو ہویء ۔ عایشہ عالم نے باپ کی موافقت میں اایک پر اثر نظم سنایء جسے سب نے بے حد پسند کیا۔انھوں نے حاضرین کی کلب میں شرکت پر مسرت کا اظہار کیا۔ پروگرام کا آغاز فایئز دقاق الشامی کی تلاوت کلام پاک سے ہوا ؓحفل میں  چھوٹی بچیوں خدیجہ و حفصہ کی شرکت سے بڑی رونق رہی ۔اتفاق سے عبدالقیوم   و زلیخابچیلانی  طبعیت  کی نا سازی کی وجہ سے شریک نہ ہو سکے لیکن جعفر سکندر اور انکی اہلیہ نے سالگرہ کا کیک کاٹا ۔ خالد عزیز و انکی اہلیہ کسی وجہ سہ سے شریک محفل نہ ہو  سکے لیکن انھوں نے ایک قظعہ اس موقع کی مناسبت لکھ  کر بھجوایا ۔سالگرہ کی خوشی میں بہترین لنچ کا انتظام کیا گیا تھا جس کے لیے کلب کی خواتین قابل تحسین ھیں جن لوگوں نے اس مجلس میں شرکت کی ان کے نام مندرج ذیل ہیںڈاکٹر محبوب عالم ،عایشہ عالم ، ریحانہ خان ، فہیم صدیقی ،سید شکیل احمد اظہر بخاری ،افضل خان ، محمد نعیم الدین ،شاہ بانو ، تنویر قریشی ، شہزاد ، طاہرہ بتول، قمر ،عبدالعلیم ، درخشاں علیم ،وبالوہاب ، بیگم وہاب ، شیرین داود زرینہ کاریگر ، افشاں حیدرآبادی ، حبیبہ بدر ، بے بی خدیجہ اور بیبی حفصہ ، فاییز دقاق
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔