بھارتی ہائی کمشنر پاک بھارت کرکٹ کی بحالی کے لیے پُر امید

بھارتی ہائی کمشنر پاک بھارت کرکٹ کی بحالی کے لیے پُر امید

لاہور: پاکستان میں بھارتی ہائی کمشنر اجے بساریہ نے کہا کہ پاکستان اور بھارت کے عوام دونوں ممالک کے درمیان دو طرفہ کرکٹ کی بحالی چاہتے ہیں، دونوں ممالک کے درمیان حالات سازگار ہوتے ہی کرکٹ بھی بحال ہوجائے گی۔

بھارتی ہائی کشمنر اجے بساریہ نے لاہور چیمبر آف کامرس کے دورے کے دوران تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہنا تھا کہ دونوں ممالک کو اپنے ماضی کو بھلا کر آگے بڑھنا چاہیے۔

انہوں نے زور دیا کہ دونوں ممالک کو ٹرانزٹ اور روابط کو بہتر بنانا چاہیے، دونوں ممالک کے تاجروں کو ویزا کے حوالے سے کئی رکاوٹوں کا سامنا ہے۔

بھارتی ہائی کمشنر کا کہنا تھا کہ ’پاکستان اور بھارت کے درمیان کسی تیسرے فریق سے تجارت کا حجم زیادہ ہے اور براہِ راست تجارت 2.2 ارب ڈالر ہے، تاہم ورلڈ بینک کے مطابق دونوں ممالک کی باہمی تجارت 30 ارب ڈالر تک ہو سکتی ہے‘۔

اجے بساریہ کا کہنا تھا کہ گزشتہ 70 برس سے اپنائی ہوئی پالیسی سے کسی کو فائدہ نہیں ہوا۔

انہوں نے کہا کہ بھارت اور پاکستان کی دو تہائی آبادی کی عمر 35 سال سے کم ہے، اور اب نوجوانوں کے بھارت اور پاکستان کو آگے بڑھنا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ نوجوان نسل ماضی کی تلخیوں سے دور ہے، اور دونوں ممالک میں باہمی تجارت بڑھانے کی گنجائش بھی موجود ہے اور اس کے ساتھ ساتھ تمام مشکلات کے باوجود تجارت بڑھانے پر بات کرنے کی ضرورت ہے۔

اجے بساریہ نے کہا کہ ’غربت، پسماندگی اور ناخواندگی دونوں ممالک کے مشترکہ مسائل ہیں، تاہم ہمیں پرامن مستقبل کے لئے مل کام کرنا ہو گا‘۔

کرکٹ کے حوالے سے بات کرتے ہوئے اجے بساریہ کا کہنا تھا کہ پاکستان اور بھارت کے عوام دوطرفہ کرکٹ کی بحالی چاہتے ہیں، تاہم دونوں اطراف کے حالات ساز گار ہوتے ہی کرکٹ بھی بحال ہو جائے گی۔

پاکستانی ہائی کمشنر کو ہراساں کرنے کے حوالے سے بات کرتے ہوئے اجے بساریہ نے کہا کہ اس حوالے سفارتی سطح پر بات چیت جاری ہے۔

انہوں نے کہا کہ مسائل کے حل کے لیے میڈیا کا کردار بہت اہم ہے، حقیقت سے ہٹ کر رپورٹنگ کرنے سے مسائل بڑھتے ہیں۔

اجے بساریہ کا کہنا تھا کہ پانی کے مسئلے پر دونوں ممالک کے اعلیٰ حکام کے مابین بھارت میں بات چیت ہو رہی ہے۔