ڈالر کا مہنگا ہونا پی ایس ایل فرنچائزز پر بوجھ بن گیا: نجم سیٹھی

ڈالر کا مہنگا ہونا پی ایس ایل فرنچائزز پر بوجھ بن گیا: نجم سیٹھی

 سابق چیئرمین پی سی بی نجم سیٹھی کا کہنا ہے کہ ڈالر کا مہنگا ہونا پی ایس ایل فرنچائزز پر بوجھ بن گیا، پی سی بی کی چند کوتاہیوں کی وجہ سے بھی بورڈ اور فرنچائزز کے درمیان مسائل زیادہ ہوئے۔ ایک انٹرویو میں سابق چیئرمین پی سی بی نجم سیٹھی کا کہنا تھا کہ پی ایس ایل فرنچائزز کے مالکان کاروباری شخصیات ہیں، انہوں نے معاہدے پر دستخط سے قبل اسے ضرور پڑھا ہوگا، پی ایس ایل مالکان نے ہم سے پوچھا تھا کہ لیگ میں سرمایہ کاری کیلئے کیا درکار ہے اور انہیں کتنا منافع ہوگا، میرے ہوتے ہوئے فرنچائزز کے ساتھ کوئی مسائل نہیں رہے۔نجم سیٹھی کا کہنا تھا کہ مسئلہ یہ ہے کہ روپے کے مقابلے میں ڈالر مہنگا ہوگیا جس کی وجہ سے فرنچائزز پر بوجھ میں اضافہ ہوا، پی سی بی کی چند کوتاہیوں کے سبب بھی فرنچائزز کے ساتھ مسائل زیادہ ہوئے، کرکٹ بورڈ کو معاملات کا حل جلد تلاش کرنا چاہیئے، پی ایس ایل کی ٹیموں کو کوئی نقصان نہیں ہونا چاہیے تھا، جب 1،2 سال میں سٹیڈیم کے سٹینڈز تماشائیوں سے بھر جائیںگے تو ان مشکلات کا حل بھی نکل آئے گا۔نجم سیٹھی نے کہا کہ پی ایس ایل کا آغاز کیا تو بڑی مشکلات پیش آئیں، ہمیں کہا گیا تھا کہ اس سے قبل بھی ایسی ناکام کوششیں ہوچکی ہیں، یہ منصوبہ مکمل نہیں ہوپائے گا اور اس میں بھاری نقصان کا بھی خدشہ ہے، پی ایس ایل کی دبئی میں میزبانی سے ہمیں کوئی فائدہ حاصل نہیں ہوگا اس لیے اسے نہ ہی شروع کریں تو بہتر رہے گا۔ انہوں نے کہا کہ پی سی بی کے عہدیداروں نے بھی بتایا کہ ہم اتنا بڑا ایونٹ کرانے کی سکت نہیں رکھتے لیکن چند عہدیداروں نے لیگ کروانے کی حمایت کی، دبئی میں لیگ کرواتے ہوئے مسائل کا سامنا کرنا پڑا، ٹورنامنٹ کیلئے پہلے ایک دورانیہ دیا گیا لیکن اس کے بعد ہمیں بتایا گیا کہ اب تو یہ ونڈو بھی خالی نہیں ہے، معاملات کو مکمل کرنے میں کافی وقت لگا، سپانسرز اور اشتہارات کے علاوہ دیگر مختلف امور کے حوالے سے بھی فیصلے کرنے پڑے۔